پیغمبرِ اسلام حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مدحت، تعریف و توصیف، شمائل و خصائص کے نظمی اندازِ بیاں کو نعت یا نعت خوانی یا نعت گوئی کہا جاتا ہے۔عربی زبان میں نعت کیلئے لفظ "مدحِ رسول" استعمال ہوتا ہے۔ اسلام کی ابتدائی تاریخ میں بہت سے صحابہ اکرام نے نعتیں لکھیں اور یہ سلسلہ آج تک جاری و ساری ہے۔ نعتیں لکھنے والے کو نعت گو شاعر جبکہ نعت پڑھنے والے کو نعت خواں یا ثئاء خواں بھی کہا جاتا ہے۔

Wednesday, 4 December 2013

naat- jiske sabab se...

الحمد لله رب العالمين والصلاة والسلام على سيد الأنبياء والمرسلين أما بعد فاعوذ بالله من الشيطان الرجيم بسم الله الرحمن الرحيم

Jiske sabab se daulat konain mili hai... wo isme nabi isme nabi isme nabi hai!!!

pucha jo basti walo ne tabdeeli e halat...
boli(n) Haleema tab se karam ki hhui barsaat...
jab aamina ke laal se ye good bhari hai!!!


siddiq ne raah e khuda jo ghar ko lutaya...
bola k kya bachaya to aaqa ko btaya...
jab aap mere sang ho to kaisi kami hai!!!

insaan ko insaniyat ka kuch na pta tha...
har ekko hi apne khudaoon ka nasha tha...
aamad se jinki raah e khuda humko mili hai!!!


mujhko madine paak mein mola bulaiye...
wo dar mujhe ik baar to mola dikhaiye...
jis dar pe qudsiyoon ki bahot bheed lagi hai!!!


milaad unka hum to mnate hi raaheinge...
naghme hum unki shan ke gaate hi raheinge...
paadta durood rabb mera har ek ghadi hai!!!

Posted by: Binte Ishrat

No comments:

Post a Comment