پیغمبرِ اسلام حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مدحت، تعریف و توصیف، شمائل و خصائص کے نظمی اندازِ بیاں کو نعت یا نعت خوانی یا نعت گوئی کہا جاتا ہے۔عربی زبان میں نعت کیلئے لفظ "مدحِ رسول" استعمال ہوتا ہے۔ اسلام کی ابتدائی تاریخ میں بہت سے صحابہ اکرام نے نعتیں لکھیں اور یہ سلسلہ آج تک جاری و ساری ہے۔ نعتیں لکھنے والے کو نعت گو شاعر جبکہ نعت پڑھنے والے کو نعت خواں یا ثئاء خواں بھی کہا جاتا ہے۔

Sunday, 11 October 2015

Naat- unki mehek ne dil ke gunche khila diye hain

ان کی مہک نے دل کے غنچے کھلا دئیے ہیں
نورِ خدا نے کیا کیا جلوے دکھا دئیے ہیں
سینے کیے ہیں روشن ، دل جگمگا دئیے ہیں
لہرا کے زلفِ مشکیں نافے لٹا دئیے ہیں
ان کی مہک نے دل کے غنچے کِھلا دئیے ہیں
جس راہ چل دئیے ہیں کوچے بسا دئیے ہیں

آنکھیں کسی نے مانگیں ، جلوا کسی نے مانگا
ذرہ کسی نے چاہا ، صحرا کسی نے مانگا
بڑھ کر ہی اُس نے پایا جتنا کسی نے مانگا
مرے کریم سے گر قطرہ کسی نے مانگا
دریا بہا دئیے ہیں ، دُر بے بہا دئیے ہیں

گر یوں ہی رنگ اپنا محشر میں زرد ہوگا
دوزخ کے ڈر سے لرزاں ہر ایک فرد ہوگا
تیرے نبی کو کتنا امت کا درد ہوگا
اللہ! کیا جہنم اب بھی نہ سرد ہوگا
رو رو کے مصطفٰی نے دریا بہا دئیے ہیں

اپنے کرم سے جو دو ، اب تو تمہاری جانب
جو جی میں آئے سو دو ، اب تو تمہاری جانب
پا لو ہمیں کہ کھو دو ، اب تو تمہاری جانب
آنے دو یا ڈبو دو ، اب تو تمہاری جانب
کشتی تمہیں پہ چھوڑی ، لنگر اٹھا دئیے ہیں

لازم نہیں ہے کوئی ایسے ہی رنج میں ‌ہو
جاں پر بنی ہو یا پھر ویسے ہی رنج میں ہو
ان کا غلام چاہے جیسے ہی رنج میں ہو
ان کے نثار ، کوئی کیسے ہی رنج میں ہو
جب یاد آگئے ہیں ، سب غم بھلا دئیے ہیں

اہلِ نظر میں تیرا ذہنِ رسا مسلم
دنیائےِ علم و فن میں ہے تیری جا مسلم
نزدِ نصیر تیری طرزِ نوا مسلم
ملکِ سخن کی شاہی تم کو رضا مسلم
جس سمت آگئے ہو سکے بٹھا دئیے ہیں

 

No comments:

Post a Comment