پیغمبرِ اسلام حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مدحت، تعریف و توصیف، شمائل و خصائص کے نظمی اندازِ بیاں کو نعت یا نعت خوانی یا نعت گوئی کہا جاتا ہے۔عربی زبان میں نعت کیلئے لفظ "مدحِ رسول" استعمال ہوتا ہے۔ اسلام کی ابتدائی تاریخ میں بہت سے صحابہ اکرام نے نعتیں لکھیں اور یہ سلسلہ آج تک جاری و ساری ہے۔ نعتیں لکھنے والے کو نعت گو شاعر جبکہ نعت پڑھنے والے کو نعت خواں یا ثئاء خواں بھی کہا جاتا ہے۔

Sunday, 1 December 2013

NAAT- TUMHARE DAR PE JO MAIN BAARYAAB HO JAUN.

الحمد لله رب العالمين والصلاة والسلام على سيد الأنبياء والمرسلين أما بعد فاعوذ بالله من الشيطان الرجيم بسم الله الرحمن الرحيم

tumhare dar pe jo main baaryaab ho jaun...
qasam khuda ki shaha kaamyaab ho jaun!!!


jo paun boosa e paaye huzor kya kehna...
main zarra shams o qamar ka jawaab ho jaun!!!


meri haqeeqat e fani bhi kuch haqeeqat hai...
marun jo aaj khayaal o khawaab ho jaun!!!


jahan k qos e quzah se fareeb khayein kyun...
main apne qalb o nazar ka hijaab ho jaun!!!


jahan ki bigdi usi aastaan se banti hai...
main kyun na waqf e dar eaan janaab ho jaun!!!


tumhara naam liya hai talatum e gam mein...
main ab to paar risalat ma aab ho jaun!!!


ye meri duri badal jaye qurb mein AKHTAR...
agar wo chahein to main baaryaab  ho jaun!!!

Posted by: Binte Ishrat

No comments:

Post a Comment