پیغمبرِ اسلام حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مدحت، تعریف و توصیف، شمائل و خصائص کے نظمی اندازِ بیاں کو نعت یا نعت خوانی یا نعت گوئی کہا جاتا ہے۔عربی زبان میں نعت کیلئے لفظ "مدحِ رسول" استعمال ہوتا ہے۔ اسلام کی ابتدائی تاریخ میں بہت سے صحابہ اکرام نے نعتیں لکھیں اور یہ سلسلہ آج تک جاری و ساری ہے۔ نعتیں لکھنے والے کو نعت گو شاعر جبکہ نعت پڑھنے والے کو نعت خواں یا ثئاء خواں بھی کہا جاتا ہے۔

Friday, 19 July 2013

NAAT - NABI KA AASTAAN HO...

الحمد لله رب العالمين والصلاة والسلام على سيد الأنبياء والمرسلين أما بعد فاعوذ بالله من الشيطان الرجيم بسم الله الرحمن الرحيم




Nabi ka aastaan ho aur mera sar ho to kya kehna...
Dam e aakhir agar aisa muqaddar ho to kya kehna!!!


Gubaar e raah e taiba mere sar par ho to kya kehna...
Jo wo khak e kaf e paaye payambar ho to kya kehna!!!


Kisi paththar k neeche meri turbat ho madine mein...
Wo paththar bhi unhi k dar ka paththar ho to kya kehna!!!


Jinhein aa aake chumein wo hawaein sabz gumbad ki...
Meri turbat pe un phooloon ki chadar ho to kya kehna!!!


Khusha qismat jo dam bhar ko wo nazre zindagi bakhshi...
Ye aalam zindagi ka zindagi bhar ho to kya kehna!!!


Khuda ka saamna hai ru ba ru hain shaafa e mehshar...
Munawwar ab zra naat e Munawwar ho to kya kehna!!!

No comments:

Post a Comment